Quetta Chember of Commerce

Government Organization

2:13
کوئٹہ (پ ر )ایران میں متعین پاکستانی سفیر محمد آصف درانی نے بلوچستان کی صنعت و تجارت اورانڈسٹریز سے وابستہ افراد پر زوردیاہے کہ وہ ایرانی تاجروں کے ساتھ جوائنٹ ونچر کرتے ہوئے دونوں ممالک کے درمیان تجارتی تعلقات کو فروغ دینے کیلئے اپنا کرداراداکریں ،ملک اور صوبے کی تجارت سے وابستہ افراد کیلئے سہولیات اور آسانیاں پیدا کرنا ان کی ترجیحات میں شامل ہیں اس سلسلے میں وہ کوئی لمحہ فروگزاشت نہیں کرینگے ،میں بلوچستان کی صنعت وتجارت ،ٹرانسپورٹ ودیگر شعبوں سے وابستہ افراد کو دعوت دیتاہوں کہ وہ ایران آئیں تاکہ انہیں ایرانی صنعت وتجارت اور ٹرانسپورٹ کے شعبوں سے تعلق رکھنے والے سرمایہ کاروں کے ساتھ مل بیٹھ کر معاملات طے کرنے کا موقع ملے ۔ان خیالات کااظہار انہوں نے ایوان صنعت وتجارت کوئٹہ بلوچستان میں چیمبرآف کامرس کے عہدیداران اور اراکین کے ساتھ منعقدہ اجلاس کے دوران اظہار خیال کرتے ہوئے کیا۔اس سے قبل چیمبرآف کامرس اینڈانڈسٹری کے صدر حاجی عبدالودود اچکزئی ،نائب صدر حاجی اختر کاکڑ ،فاؤنڈ ممبر حاجی نیاز محمد عرف نیاز لالا ،حاجی ایوب ،جمعہ خان بادیزئی ،بدرالدین کاکڑ ،حاجی جانان اچکزئی سمیت دیگر نے ان کااستقبال کیا اس موقع پر چیمبرآف کامرس کے صدر حاجی عبدالودود اچکزئی کاکہناتھا کہ ایران سے کوئٹہ امپورٹ ہونیوالے مال پر ٹیکس میں حکومت نے چیمبرآف کامرس کی کوششوں کے بعد 25سے 30فیصد کمی کااعلان کیا ہے لیکن اس کے باوجود جو مال یہاں سے ایران ایکسپورٹ ہورہاہے پر ٹیکس کم نہیں کیا گیا اور نہ ہی کوئی سہولت دی گئی ہے ،انہوں نے کہاکہ پاکستانی مال بردارگاڑیوں کو زاہدان کے علاوہ ایران کے کسی اور شہر میں ان لوڈ ہونے کی اجازت نہیں اس سلسلے میں ہم نے میر جاوا میں گاڑیوں کی ان لوڈ کرنے کی اجازت طلب کی ہے لیکن اس پر کوئی عملددرآمد نہیں ہورہاہے انہوں نے کہاکہ ویزے کی اجراء کیلئے ہر بار تمام تر دستاویزات طلب کئے جاتے ہیں جس کے باعث ویزے کی اجراء میں تاخیر ہوتی ہے ،اس لئے اس سلسلے میں سفیر ایرانی حکام سے بات کی جائیں،انہوں نے پرمٹ کے خاتمے ،ڈاکومنٹس کی تصدیق کی فیس میں اضافے ،میر جاوا میں مال کیلئے گواداموں کی فراہمی اور وہاں سے لوڈنگ اور ان لوڈنگ کی اجازت کے سلسلے میں بھی سفیر کو کرداراداکرنے کی استدعا کی۔ اس موقع پر ایران میں پاکستانی سفیر محمد آصف درانی کاکہناتھا کہ بلوچستان سے تعلق رکھنے والے صنعت وتجارت اور ٹرانسپورٹ کے شعبہ جات سے منسلک افراد اور سرمایہ کا ر ایرانی تجارت سے وابستہ افراد کے ساتھ جوائنٹ ونچر کے تحت کام کرے تو اس سے دونوں ممالک کے درمیان مثبت تجارتی سرگرمیوں کو فروغ ملے گا بلکہ تعلقات میں بہتری بھی آئے گی انہوں نے کہاکہ مسائل کے حل کیلئے ان کی صحیح نشاندہی ضروری ہواکرتی ہے ،اس وقت تک ہم اپنے حقوق کے حصول اور مسائل کے حل میں کامیاب نہیں ہوسکتی جب تک اس کی صحیح نشاندہی نہ کرسکیں ،ایران کے ساتھ پاکستانی تجارت سے وابستہ افراد کے مسائل پر بات چیت کا سلسلہ جاری ہے ہماری کوشش ہے کہ یہاں کے تجارت سے وابستہ افراد کو درپیش مشکلات کا خاتمہ کیاجائے ،انہوں نے کہاکہ تجارت سے وابستہ افراد کو جوائنٹ ونچر کے ساتھ آپس میں رابطوں کو بھی بڑھانا ہوگا ،انہوں نے کہاکہ صنعت وتجارت،انڈسٹریز وٹرانسپورٹ سے وابستہ افراد نے آج جو تجاویز پیش کیئے ہیں ان پر عملدرآمد کیلئے ضرور اقدامات اٹھائے جائینگے ،انہوں نے بلوچستان کے صنعت وتجارت ،انڈسٹریز اور ٹرانسپورٹ سے وابستہ چیمبرآف کامر س کے عہدیداران اور ممبران کو ایران کے دورے کی دعوت دی اور کہاکہ اس سلسلے میں انہیں ایک ہفتے قبل آگاہ کیاجائے ،انہوں نے کہاکہ تجارت میں نان ٹیرف بیریئرز کا خاتمہ ہماری ترجیحات میں شامل ہیں ،بلوچستان کے چیمبرآف کامرس کے اراکین اور تجارت سے وابستہ افراد درپیش مسائل کے حل کیلئے ایران میں قائم پاکستانی سفارت خانے سے ضرور رابطے میں رہے ،اس موقع پر چیمبرآف کامرس کے نائب صدر حاجی اختر کاکڑ ،فاؤنڈرممبر نیاز لالا ،جمعہ خان بادیزئی ،حاجی ایوب بدرالدین کاکڑ سمیت دیگر نے انہیں مختلف تجاویز بھی پیش کی اور اجلاس کے اختتام پر چیمبرآف کامرس کے صدر کی جانب سے مہمان کو یادگاری شیلڈ پیش کیاگیا۔
2 years ago